پیر, جولائی 15, 2024
پیر, جولائی 15, 2024

ہومFact CheckFact Check: حوثیوں کی جانب سے اسرائیل سے وابستہ بحری جہاز کو...

Fact Check: حوثیوں کی جانب سے اسرائیل سے وابستہ بحری جہاز کو ڈرون سے نشانہ بنانے کی نہیں ہے یہ تصویر

Authors

Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation in Mass Communication & Journalism from Lucknow University.

Claim
یہ تصویر حوثیوں کی جانب سے اسرائیل سے وابستہ بحری جہاز کو ڈرون سے نشانہ بنانے کی ہے۔
Fact
یہ تصویر تقربیاً 4 سال پرانی ہے اور حوثیوں کی جانب سے حالیہ اسرائیلی بحری جہازوں کو نشانہ بنائے جانے سے اس کا کوئی تعلق نہیں ہے۔

سوشل میڈیا پر ایک بحری جہاز کی تصویر کو اسرائیل اور فلسطین لڑائی سے منسوب کرکے شیئر کیا جا رہا ہے۔ جس میں ایک بحری جہاز سے دھواں اور اس کے اوپر ہیلی کاپٹر نظر آرہا ہے۔ دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ یہ تصویر حوثیوں کی جانب سے اسرائیل سے وابستہ بحری جہاز کو ڈرون سے نشانہ بنائے جانے کی ہے۔

تصویر کے ساتھ ایک مستند ایکس ہینڈل نے کیپشن میں لکھا ہے کہ “یمن حدیدہ بندرگاہ سے 60 میل کے فاصلے پر یمن کے حوثیوں نے اسرائیل سے وابستہ ایک اور بحری جہاز پر بمبار ڈرون کشتیوں سے حملہ کردیا۔ شدید فائرنگ کا تبادلہ بھی ہوا ہے”۔

یہ تصویر اسرائیل سے وابستہ بحری جہاز کو حوثیوں کی جانب سے کئے گئے حملے کی نہیں ہے۔
Courtesy: X @GNMadani

Fact Check/Verification

اسرائیل سے وابستہ بحری جہاز کو ڈرون سے نشانہ بنائے جانے کا بتاکر شیئر کی گئی تصویر کو ریورس امیج سرچ کیا تو ہمیں اسکرین پر 2019 کو شائع شدہ متعدد میڈیا رپورٹس کے لنک فراہم ہوئے۔ 17 دسمبر 2019 کو شائع شدہ حریت ڈیلی نیوز ویب سائٹ پر ایک رپورٹ میں ہوبہو تصویر ملی۔ جس کے عنوان میں لکھا ہے کہ بحریہ میڈ میں روسی اور شامی حکومت نے مشترکہ مشقیں شروع کردیں۔

Courtesy: Hurriyet Daily News

ایک اگست 2019 کو شائع ترکیہ کی نیوز ایجنسی انادولو کی ایک رپورٹ میں ہمیں ہوبہو تصویر فراہم ہوئی۔ اس رپورٹ کے عنوان میں لکھا تھا “بحیریہ بالٹک میں روسی فوجی مشق”۔ لیکن تصویر کب اور کہاں کی ہے یہ واضح نہیں کیا گیا ہے۔ البتہ میڈیا رپورٹس سے یہ واضح ہوتا ہے کہ اسرائیل سے وابستہ بحری جہاز کو حوثیوں کے لڑاکے سمندر میں مسلسل نشانہ بنا رہے ہیں۔ لیکن وائرل تصویر کم از کم 4 سال پرانی ہے۔

Courtesy: Anadolu Agency

Conclusion

لہٰذا نیوز چیکر کی تحقیقات سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ یہ تصویر حوثیوں کی جانب سے اسرائیل سے وابستہ بحری جہاز کو نشانے کی نہیں ہے، بلکہ یہ تقربیا 4 سال پرانی ہے۔

Result: False

Sources
Reports published by Hurriyet Daily News and Anadolu Agency on 2019


نوٹ: کسی بھی مشتبہ خبر کی تحقیق، ترمیم یا دیگر تجاویز کے لئے ہمیں واہٹس ایپ نمبر 9999499044 پر آپ اپنی رائے ارسال کر سکتے ہیں۔ ساتھ ہی ہمارے واہٹس ایپ چینل کو بھی فالو کریں۔

Authors

Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation in Mass Communication & Journalism from Lucknow University.

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

Most Popular