اتوار, فروری 5, 2023
اتوار, فروری 5, 2023

HomeFact Checkکیا گول کیپر کے گول روکنے کے بعد سجدہ کرنے کی یہ...

کیا گول کیپر کے گول روکنے کے بعد سجدہ کرنے کی یہ ویڈیو قطر فیفا ورلڈ کپ کے دوران کی ہے؟ گمراہ کن دعوے کے ساتھ ویڈیو وائرل

قطر فیفا ورلڈ کپ میں کئی مسلم ممالک کھیل رہے ہیں اور کھلاڑی میچ کے دوران میدان میں قدرت الہی کا شکر ادا کرتے ہوئے بھی نظر آئے۔ اسی کے پیش نظر گول کیپر کے گول روکنے کے بعد سجدہ کرنے کی ایک ویڈیو خوب وائرل ہو رہی ہے۔ دعویٰ ہے کہ قطر فیفا ورلڈ کپ 2022 میں گول کیپر گول روکنے کے بعد سجدے میں جا گرا۔

فیس بک پر ایک صارف نے ویڈیو کے کیپشن میں لکھا ہے کہ “ماشاءالله قطر فیفا ورلڈ کپ میں گول کیپر گول روکنے کے بعد سجدے میں۔ قطر فٹبال ورلڈ کپ میں اسلام کی عکاسی کرتے ہوئے بہت ساری چیزیں دکھائی گئی جو بہت ہی فخر کی بات ہے ہم مسلمانوں کے لیے”۔

گول کیپر کے گول روکنے کے بعد سجدہ کرنے کی یہ ویڈیو قطر فیفا ورلڈ کپ کے دوران کی نہیں ہے۔
Courtesy:FB/shahalamfootballclubsfc

اس ویڈیو کو قطر فیفا ورلڈ کپ سے منسوب کرکے فیس بک، ٹویٹر اور یوٹیوب پر متعدد صارفین نے شیئر کیا ہے۔ جس کا آرکائیو لنک یہاں اور یہاں دیکھا جا سکتا ہے۔

Fact Check/Verification

گوگل کیپر کے گول روکنے کے بعد سجدہ کرنے والی ویڈیو کو ہم نے انوڈ کی مدد سے کیفریم میں تقسیم کیا اور ان میں سے ایک فریم کو گوگل ریورس امیج سرچ کیا۔ اس دوران ہمیں دی سن نیوز ویب سائٹ پر 13 فروری 2021 کو شائع شدہ رہورٹ میں ہوبہو ویڈیو ملی۔ جس سے واضح ہوا کہ ویڈیو پرانی ہے اور اس کا فیفا ورلڈ کپ 2022 سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

Courtesy: The Sun

مزید سرچ کے دوران ہمیں ڈیلی اسٹار، گیو می اسپورٹ، ڈیلی میل اور رسین ٹوڈے نامی نیوز ویب سائٹس پر ویڈیو کے ساتھ شائع11 اور 12 فروری 2021 کی رپورٹس ملیں۔ جس میں دی گئی معلومات کے مطابق یہ ویڈیو 2021 قطر فیفا کلب ورلڈکپ کی ہے۔ جہاں الاہلی اور پالمیرس کے درمیان ہو رہے میچ کے دوران الاہلی کے گول کیپر محمد الشیناوی نے پالمیرس کے کھیلاڑی رونی کا گول روکنے کے بعد سجدہ کیا تھا۔ جسے حالیہ فیفا ورلڈ کپ 2022 کا بتاکر شیئر کیا جا رہا ہے۔

Courtesy: Daily Star

Conclusion

نیوز چیکر کی تحقیقات میں یہ ثابت ہوا کہ گول کیپر کے گول روکنے کے بعد سجدہ کرنے والی وائرل ویڈیو پرانی ہے اور قطر فیفا ورلڈ کپ 2022 سے اس کا کوئی تعلق نہیں ہے۔

Result: Partly False

Our Sources

Report Published by The Sun on 12 Feb 2021
Report Published by RT.com on 11 Feb 2021
Report Published by DailyMail on 11 Feb 2021

کسی بھی مشکوک خبر کی تحقیقات، تصحیح یا دیگر تجاویز کے لیے ہمیں واٹس ایپ کریں: 9999499044 یا ای میل: [email protected]

Mohammed Zakariya
Mohammed Zakariya
Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation in Mass Communication & Journalism from Lucknow University.
Mohammed Zakariya
Mohammed Zakariya
Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation in Mass Communication & Journalism from Lucknow University.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular