منگل, ستمبر 27, 2022
منگل, ستمبر 27, 2022

HomeFact CheckWeekly Wrap:پانچ منٹ میں پانچ اہم وائرل پوسٹ کے حوالے سے پڑھیں...

Weekly Wrap:پانچ منٹ میں پانچ اہم وائرل پوسٹ کے حوالے سے پڑھیں ہماری تحقیقات

آج ہم آپ کےلیے کچھ ایسی اسٹوری کو مختصر انداز میں پیش کرنے جارہے ہیں۔جو حال کے دنوں میں سوشل میڈیا پر بھاری تعداد شیئر کیاگیا ہے۔درج ذیل میں یک بعد دیگرے اسٹوری کو ملاحظہ فرمائیں۔

کیا سچ میں قرآن پاک کی آیتوں میں کافروں کو قتل کرنے کا حکم ہے؟

گزشتہ دنوں سوشل میڈیا پر ذاکرنائک کا 18سکینڈ کا ایک بیان وائرل کیا گیا تھا۔جس میں کافروں کو جہاں پاؤ وہاں قتل کردینے کی بات کہی گئی ہے۔جبکہ یوزروں نے ویڈیو کے ایک حصے کو ایڈیٹ کرکے عوام کوگمراہ کرنے کی کوشش کی ہے۔اسلام ناحق کسی کا قتل کرنا حرام کہا گیا ہے۔

پورا مضمون یہاں پڑھیں۔

سالوں پہلے پاکستان میں ہوئے احتجاج کی تصویر سویزرلینڈ کا بتاکر شیئر کیاگیا؟

گزشتہ دنوں 14سال پہلے پاکستان میں پیغمرؐاسلام کے یورپی اخبار میں شائع ہونے والےخاکوں کے خلاف احتجاج کی تصویر کو سویزرلینڈ کے مسلم مہاجرین کے احتجاج کا بتاکر شیئر گیا۔جو کہ سراسر غلط ہے۔

پوری اسٹوری یہاں پڑھیں۔

حال کے دنوں میں ایودھیادھماکہ کے ملزم ڈاکٹرعرفان نے صدرجمہوریہ کولکھا خط؟

ایودھیادھماکہ کے ملزم ڈاکٹر عرفان کے حوالے دعویٰ کیاگیا تھا کہ انہوں نے صدرجمہوریہ کو جیل سے خط لکھا ہے۔جبکہ یہ خبر فرضی ہے۔عرفان 2007میں صدرجمہوریہ کو خط لکھا تھا۔

پورامعاملہ یہاں پڑھیں۔

صدام حسین کی لاش کے12 سال پرانے ویڈیو کو فرضی دعوے کے ساتھ کیا جا رہا شئیر

حال کے دنوں میں صدام حسین کے حوالے سے دعویٰ کیاجارہا ہے کہ ان کی لاش کو منتقل کرنے کےلیے جب قبر سے نکالاگیا تو لاش تروتازہ تھا۔جبکہ وائرل ویڈیو 12سال سے پرانہ ہے۔یہ دعویٰ کرنا کہ حال کے دنوں میں نکالاگیا ہے لاش تو یہ فرضی دعویٰ ہے۔

پوری خبر یہاں پڑھیں۔

ہجومی تشدد کی شکار کانگریس لیڈر کی تصویر کو فرضی دعوے کے ساتھ شیئر کیاگیا ہے

کانگریس لیڈر رومی ناتھ کی تصویر سوشل میڈیا پر مذہبی رنگ دےکر شیئر کیاگیا۔جوکہ سرا سر غلط ہے۔رومی ناتھ کو 100لوگوں کے ہجوم نے ہوٹل میں کھاناکھاتے وقت ان کے شوہر اور انہیں ماراپیٹا تھا۔

پوری کہانی یہاں پڑھیں۔

نوٹ:کسی بھی مشتبہ خبرکی تحقیق،ترمیم یا دیگرتجاویز کے لئے ہمیں نیچے دئیے گئے واہٹس ایپ نمبر پر آپ اپنی رائے ارسال کر سکتےہیں۔

 9999499044

Mohammed Zakariya
Mohammed Zakariya
Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation from Lucknow University.
Mohammed Zakariya
Mohammed Zakariya
Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation from Lucknow University.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular