جمعرات, ستمبر 29, 2022
جمعرات, ستمبر 29, 2022

HomeFact Checkدہلی الیکشن کے دوران مسلمانوں نے لگائے اشتعال انگیز نعرے!وائرل دعوے کا...

دہلی الیکشن کے دوران مسلمانوں نے لگائے اشتعال انگیز نعرے!وائرل دعوے کا کیا ہے سچ؟پڑھیئے ہماری پڑتال

 

دعویٰ

دہلی چناؤ کی ووٹنگ مکمل ہوچکی ہے۔کنیڈا نزاد صحافی طارق فتح نے پینتالیس سکینڈ کا ایک ویڈو اپنے ٹویٹرہینڈل پر شیئر کیا ہے۔طارق نے دعویٰ کیا ہے کہ دہلی الیکشن کے دوران مسلم غنڈوں نے اسلام کو بڑھاوا دینے کے لئے ہندؤں کے خلاف اشتعال انگیز نعرے لگارہے ہیں۔

  

تصدیق

طارق فتح کی جانب سے کئے گئے دعوے کو پڑھنے کے بعد ہم نے اپنی تحقیقات شروع کی۔اس دوران ہمیں موجودہ دعوے کے علاوہ سوشل میڈیا پر برسوں پرانے کئی پوسٹ مختلف دعوے کے ساتھ ملے۔جو مندرجہ ذیل میں ہے۔

<iframe src=”https://www.facebook.com/plugins/post.php?href=https://www.facebook.com/top24now/posts/433864657198553&width=500″ width=”500″ height=”545″ style=”border:none;overflow:hidden” scrolling=”no” frameborder=”0″ allowTransparency=”true” allow=”encrypted-media”></iframe>

 

ہماری تحقیق

سوشل میڈیا پر ملی جانکاری کے بعد ہمیں یقین ہوگیا کہ وائرل ویڈیو پرانا ہے۔پھر ہم نے مزید کیورڈ سرچ کیا۔اس دوران ہمیں اسکرول نیوز کے ویب سائٹ پر ایک خبر ملی۔جس کے مطابق وائرل ویڈیو راجستھان کے ادے پور کا ہے۔جہاں ایک مسلم مزدور کا قتل شمبھو نامی شخص نے کردیا تھا۔جس کے بعد مسلمانوں نے اس کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔جس میں لوگوں نے ہندوستان ہمارا ہے کا نعرہ بلند کیاتھا۔

<blockquote class=”embedly-card”>

Rajasthan hate crime: Gruesome murder forgotten, protest rally by Muslims in Udaipur the villain now

Just under a fortnight after Muslim labourer Mohammad Afrazul was hacked to death and burnt in Rajasthan’s Rajsamand town on December 6 and a gruesome video of the crime went viral, the spotlight has shifted from the murder to a protest rally held by Muslims on December 8 in nearby Udaipur.

</blockquote>

<script async src=”//cdn.embedly.com/widgets/platform.js” charset=”UTF-8″></script>

 

اسکرول نیوز پر ملی جانکاری سے یہ صاف ہوگیا کہ وائرل ویڈیو دوہزار سترہ کا ہے نا کہ دہلی الیکشن کے درمیان کا۔پھر ہم نے وائرل ویڈیو میں لگائے گئے اشتعال انگیز نعرے کی حقیقت جاننے کے لئے مزید کیورڈ سرچ کیا۔جہاں ہمیں اس تعلق سے کئی خبریں ملیں۔جس کے مطابق شمبھونامی شخص نے مسلم مزدور محمد افرازل کو پہلے کلہاڑی سے مارا پھر اسے آگ لگا کر موت کے منہ میں جھونک دیا۔جس کے  بعد مشتعل مسلمانوں نے راجستھان کے ادے پورمیں احتجاجی مظاہرہ کیا۔جس کے بعد غصے کی تاب نہ لا کر اشتعال انگیز نعرے بھی بلند کئے۔اب یہ واضح ہوتا ہے کہ وائرل ویڈیو کا تلعق دہلی الیکشن سے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔

 

<blockquote class=”embedly-card”>

 

हिंदुस्तान में रहना होगा अल्लाह ओ अकबर कहना होगा ??? l Toshi talkies


हिंदुस्तान में रहना होगा अल्लाह ओ अकबर कहना होगा ??? This video only for news propose . Note. I don’t have any copyright on this video and its taken from Ind…


</blockquote>

<script async src=”//cdn.embedly.com/widgets/platform.js” charset=”UTF-8″></script>

<blockquote class=”embedly-card”>

PressReader.com – Your favorite newspapers and magazines.

Connecting People through News. All-you-can-read digital newsstand with thousands of the world’s most popular newspapers and magazines. Vast selection of top stories in full-content format available for free.

</blockquote>

<script async src=”//cdn.embedly.com/widgets/platform.js” charset=”UTF-8″>                                                                                                                           

نیوزچیکر کی تحقیق میں یہ ثابت ہوتا ہے کہ وائرل ویڈیو دوسال پرانہ ہے اوردہلی الیکشن سے اس کا کوئی لینا دینا نہیں ہے۔راجستھان کے ادے پور میں مسلمانوں نے ہجومی تشدد کے خلاف احتجاج کے دوران اشتعال انگیز نعرے لگائے گئے تھے۔ 

ٹولس کا استعما

گوگل کیورڈ سرچ

ریورس امیج سرچ

یوٹیوب سرچ

ٹویٹرایڈوانس سرچ

نتائج:جھوٹا دعویٰ(گمراہ کُن)

نوٹ:کسی بھی مشتبہ خبرکی تحقیق،ترمیم یا دیگرتجاویزکے لئے ہمیں نیچے دئیے گئے واہٹس ایپ نمبر پر آپ اپنی رائے ارسال کر سکتےہیں۔۔

9999499044

Mohammed Zakariya
Mohammed Zakariya
Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation from Lucknow University.
Mohammed Zakariya
Mohammed Zakariya
Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation from Lucknow University.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular