اتوار, ستمبر 25, 2022
اتوار, ستمبر 25, 2022

HomeFact Checkدہلی کے روہنگیا پناہ گزینوں کی تصویر کو فرضی دعوے کے ساتھ...

دہلی کے روہنگیا پناہ گزینوں کی تصویر کو فرضی دعوے کے ساتھ کیا گیا شیئر!وائرل دعوے کا پڑھیئے سچ

دعویٰ

دہلی کے روہینگیا پناہ گزیں سڑک کنارے رہتا ہے۔ جس کی تین بیویاں،جن میں دوحاملہ ہیں اور ان کے آٹھ بچے ہیں۔ساتھ ہی ان کے پاس سیمسنگ ۷ سی ۷ پرو موبائل فون ہے۔جس کی قیمت انتیس ہزار روپے ہے۔ہمیں اس کی زندگی میں خوشیاں لانی ہیں۔اس لئےوقت پر ٹیکس دیجئے۔

تصدیق

سوشل میڈیا پر ایک تصویر خوب گردش کررہی ہے۔جن میں ایک نیم برہنہ شخص چارپائی پر بیٹھا ہے۔جس کے ارد گرد کچھ بچے بھی نظر آرہے ہیں۔دعویٰ کیا جارہاہے کہ یہ شخص روہینگیائی ہےاور دہلی میں روڈ کنارے رہتا ہے۔جس کی ۳بیویاں سمیت آٹھ بچے بھی ہیں۔اتنا ہی نہیں اس شخص کے پاس۲۹ ہزار کا ایک موبائل فون بھی ہے۔اس تصویر کو دیگر سوشل میڈیا کے دیگر پلیٹ فارم پر بھی شیئر کیا گیا ہے۔

ہماری کھوج

سوشل میڈیا پر روہنگیاپناہ گزینوں کی وائرل تصویر کے ساتھ کئے گئے دعوے کو پڑھنے کے بعد ہم نے اپنی تحقیقات شروع کی۔سب سے پہلے ہم نے وائرل تصویر کو گوگل ریورس امیج سرچ کیا۔جہاں ہمیں ریڈیو پاکستان کے نیوز ویب سائٹ پر شائع ایک خبر ملی۔جس میں وائرل تصویر بھی دیکھنے کو ملی۔جب ہم نے پوری خبر پر نظر ثانی کی تو وائرل تصویر کے بارے میں کچھ بھی نہیں لکھا ہواملا۔البتہ یہ ضرور لکھا تھا کہ ” اقوام متحدہ نے اپیلوں کے باوجود سات روہنگیا مسلمانوں کو میانمار واپس بھیجنے کے بھارتی فیصلے پر گہری مایوسی کا اظہار کیا ہے۔جس سے ان کی زندگیوں کو خطرہ لاحق ہو گیا ہے”

مذکورہ بالا خبر سے ملی جانکاری سے واضح ہوا کہ وائرل تصویر روہنگیاپناہ گزیںوں کی ہے۔لیکن یہ نہیں پتا چل سکا کہ وائرل تصویر آیا دہلی کی ہے یا کہیں اور کی۔پھر ہم نے وائرل تصویر کو ین ڈیکس پر سرچ کیا۔جہاں ہمیں نیوزایٹین انگلش پر وائرل تصویر ملی ۔جسے اٹھارہ جنوری دوہزار انیس کوایک خبر کے ساتھ شائع کیاگیا تھا۔لیکن اس خبر میں بھی وائرل تصویر کو فائل فوٹوقرار دیا گیا ہے۔اس دوران ہم نے گوگل کیورڈ سرچ کیا۔تب ہمیں نیوزایٹین کی ایک اور خبر ملی۔جو پندرہ اپریل دوہزار اٹھارہ کو شائع کی گئی تھی۔خبر کے مطابق دہلی کے جیت پور کنچن کنج میں رہ رہے روہنگیاں مسلمانوں کی جگیوں میں دیر رات تقریباً تین بجے آگ لگ گئی تھی۔جس میں متعدد افراد جھلس گئے تھے۔یہاں بھی وائرل تصویر کے حوالے سے کوئی خبر نہیں ملی۔ہاں تصویر کے نیچے دیباین رائے لکھا ہوا ملا۔

سبھی طرح  کی تحقیقات سے ملی جانکاری سے تسلی نہیں ملی تو ہم نے نیوزایٹین میں شائع تصویر کے نیچے لکھے دیباین رائے کے ٹویٹرہینڈل کو کھنگالا۔جہاں ہمیں دیباین کا ایک ٹویٹ ملا۔جس میں انہوں نے وائرل پوسٹ کو فرضی بتاتے ہوئے لکھا ہے کہ یہ تصویر انہوں نے اس وقت کلک کی تھی۔جب روہنگیا مسلمانوں کی جگیوں میں آگ لگی تھی۔آپ کو بتادیں کہ پندرہ  اپریل کو دہلی کے اوکھلا اسمبلی حلقہ کے تھانہ جیت پور کنچن کنج میں رہ رہے رہنگیا کی جگیوں میں آگ لگی تھی۔

نیوزچیکر کی تحقیق میں یہ ثابت ہوتا ہے کہ دہلی میں روہنگیا پناہ گزینوں کی وائرل تصویر کے ساتھ کیا گیا دعویٰ فرضی ہے۔یہ تصویر پندرہ اپریل دوہزار اٹھارہ کی ہے۔جب دہلی میں روہنگیاں پناہ گزینوں کی جگیوں میں آگ لگی تھی۔جس میں متعدد افراد جھلس گئے تھے۔

ٹولس کا استعمال

ریورس امیج سرچ

کیورڈ سرچ

ین ڈیکس سرچ

ٹویٹرایڈوانس سرچ

نتائج:جھوٹا دعویٰ(گمراہ کن)

نوٹ:کسی بھی مشتبہ خبرکی تحقیق،ترمیم یا دیگرتجاویزکے لئے ہمیں نیچے دئیے گئے واہٹس ایپ نمبر پر آپ اپنی رائے ارسال کر سکتےہیں۔۔

 9999499044

Mohammed Zakariya
Mohammed Zakariya
Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation from Lucknow University.
Mohammed Zakariya
Mohammed Zakariya
Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation from Lucknow University.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular