جمعہ, دسمبر 2, 2022
جمعہ, دسمبر 2, 2022

HomeFact Checkکولکاتا: اسلام مخالف فلم کے خلاف احتجاج کی تصویر کو غلط دعوے...

کولکاتا: اسلام مخالف فلم کے خلاف احتجاج کی تصویر کو غلط دعوے کے ساتھ کیاگیا وائرل!کیا ہے سچ؟پڑھیئے ہماری تحقیق

 

دعویٰ

سوشل میڈیا پر ایک تصویر وائرل ہورہی ہے۔ تصویر میں بچے بینر لئے احتجاج کررہے ہیں۔جس کے ساتھ ایک کیپشن بھی لکھا ہے”یہ تصویر پاکستان، سیریا اور عراق کی نہیں ہے بلکہ ہندوستان کے کولکاتا کی ہے۔جہاں بچے اسلام کی بے حرمتی کرنے والے کو قتل کرنے کو کہ رہے ہیں۔ہندو بس اسے کھڑے ہوکر دیکھیں۔کیونکہ وہ تو سیکولریزم کے نشے میں مست ہیں”یہ ٹویٹ شیفالی ویدیا نامی خاتون نے ٹویٹر پر شیئر کیا ہے۔اس ٹویٹ کوہزاروں افراد نے ری ٹویٹ اور لائک کیاہے۔

ہماری کھوج

وائرل ٹویٹ کو پڑھنے کے بعد ہم نے اپنی تحقیق شروع کی۔سب سے پہلے ہم نےریورس امیج سرچ کیا۔پھر کچھ کیورڈ سرچ کیا۔تب ہمیں اس سلسلے میں این ڈی ٹی وی ،یوایس نیوز اور سلیٹ ڈاٹ کام پر دوہزار بارہ کے ستمبر میں ہوئی شائع خبریں ملیں۔جس کے مطابق امریکی فلم ساز کی جانب سے بنائی گئی فلم اینوسینس آف مسلم کے خلاف کولکاتا میں احتجاجی مظاہرہ کیاگیاتھا۔جس میں بیس ہزار سے زائد لوگ شامل ہوئے تھے۔اس مظاہرے میں بچے بوڑھے سبھی نے شرکت کی تھی۔

<blockquote class=”embedly-card”>

Innocence of Muslims Filmmaker Headed to Prison

The man behind Innocence of Muslims, the online film/trailer that was widely blamed for many of the protests across the Middle East on and around Sept. 11, 2012, has been sentenced in California to a year in prison for violating the terms of his probation.

</blockquote>

<script async src=”//cdn.embedly.com/widgets/platform.js” charset=”UTF-8″></script>

 

<blockquote class=”embedly-card”>

Court Orders Google to Remove Anti-Muhammad YouTube Video

Indian Muslim children shout anti-U.S. slogans as they participate in a protest meeting against the film “Innocence of Muslims” in Kolkata on Oct. 5, 2012. A three-judge panel of the U.S. Court of Appeals for the Ninth Circuit ruled Wednesday that Google must remove a low-budget YouTube film ridiculing Islam’s founder as a lustful murderer who invented passages in the Quran to satisfy his sexual desires.

</blockquote>

<script async src=”//cdn.embedly.com/widgets/platform.js” charset=”UTF-8″></script>

 

نیوزچیکر کی تحقیق میں یہ ثابت ہوتا ہے کہ وائرل تصویر دوہزار بارہ کی ہے۔جہاں بچے، بوڑھے اور جوان سبھی نے اسلام مخالف امریکی فلم کے خلاف احتجاج کیا تھا۔اب یہ واضح ہوتا ہے مصنفہ شیفالی نے جوتصویرٹویٹر پر غلط دعوے کے ساتھ شیئر کیا ہے وہ پرانی ہے اور اس کا موجودہ احتجاج سے کوئی لینا دینا نپیں ہے ہے۔

ٹولس کا استعمال

گوگل ریورس امیج سرچ

کیورڈ سرچ

ٹویٹرسرچ

نتائج:فیک نیوز(غلط دعویٰ)

نوٹ:کسی بھی مشتبہ خبرکی تحقیق،ترمیم یا دیگرتجاویزکے لئے ہمیں نیچے دئیے گئے واہٹس ایپ نمبر پر آپ اپنی رائے ارسال کر سکتےہیں۔۔

 WhatsApp -:9999499044

Mohammed Zakariya
Mohammed Zakariya
Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation in Mass Communication & Journalism from Lucknow University.
Mohammed Zakariya
Mohammed Zakariya
Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation in Mass Communication & Journalism from Lucknow University.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular