جمعہ, مئی 20, 2022
جمعہ, مئی 20, 2022

HomeFact Checkنوجوان کے ہاتھوں لڑکی کے قتل کی اس ویڈیو میں نہیں ہے...

نوجوان کے ہاتھوں لڑکی کے قتل کی اس ویڈیو میں نہیں ہے کوئی مذہبی رنگ

ٹویٹر پر نوجوان کے ہاتھوں لڑکی کے قتل کی ایک ویڈیو کو مذہبی رنگ دے کر شیئر کیا جا رہا ہے۔ صارف نے ویڈیو کے کیپشن میں لکھا ہے کہ “انڈیا کی یہ ویڈیو ہے جس میں حجاب کرنے والی ایک لڑکی کو قتل کر دیا گیا اور مسلم بھائیوں کو بھی تشدد کا نشانہ بنایا گیا ہے”۔

Fact Check/Verification

نوجوان کے ہاتھوں لڑکی کے قتل کی وائرل ویڈیو کی سچائی جاننے کے لئے ہم نے کچھ گوگل کیورڈ سرچ کیا۔ اس دوران ہمیں دینک بھاسکر پر شائع 15 فروری 2022 کی ایک رپورٹ ملی۔ جس کے مطابق گجرات کے سورت کے پاسودرا گاؤں میں 12 فروری 2022 کو 21 سالہ گریشما ویکاریا کو ایک منچلے عاشق فینل گویانی نے لڑکی کی ماں اور بھائی کے سامنے گلا کاٹ کر موت کے گھات اتار دیا۔

رپورٹ میں یہ بھی واضح کیا گیا ہے کہ جب مقتول گریشا کے چچا نے منچلے عاشق سے اسے بچانے کی کوشش کی تو اس نے مقتول کے چچا کے پیٹ میں بھی چاقو مار دیا۔ حالانکہ وہ اب خطرے سے باہر ہیں۔ بتا دوں کہ اس رپورٹ میں نوجوان کے ہاتھوں لڑکی کے قتل والی وائرل ویڈیو کے ساتھ خبر شائع کی گئی ہے۔

مزید تحقیقات کے دوران ہمیں بی بی سی ہندی کے یوٹیوب چینل پر 17 فروری 2022 کو اپلوڈ شدہ ویڈیو رپورٹ ملی۔ جس کے مطابق سورت ضلع کے کامریج علاقے کے قریب پاسودرا پاٹیا نام کی جگہ پر 12 فروری 2022 کو ایک شخص نے 21 سالہ خاتون گریشما ویکاریا کو گلا کاٹ کر ہلاک کردیا۔فینل گویانی نامی نوجوان نے ایک طرفہ پیار کی وجہ سے اس کام کو انجام دیا، گریشما کے قتل کے وقت اس کی ماں بھی جائے واردات پر موجود تھیں۔

پھر ہمیں کیورڈ سرچ کے دوران احمد آباد میرر پر شائع 14 فروری 2022 کی ایک رپورٹ ملی۔ جس میں واضح کیا گیا ہے کہ قاتل اور مقتول دونوں ہی کا تعلق ایک ہی مذہب سے ہے۔ اب یہاں واضح ہوا کہ جس لڑکی کا قتل ہوا ہے وہ مسلمان نہیں ہے۔

نیوز چیکر نے نوجوان کے ہاتھوں لڑکی کے قتل کی وائرل ویڈیو سے متعلق اپنی تحقیقات میں اضافہ کرتے ہوئے سورت کے کامریج پولس اسٹیشن کے سب انسپکٹر پی ایم پرمار سے رابطہ کیا، انہوں نے ہمیں بتایا کہ اس واقعے میں کسی بھی طرح کا مذہبی رنگ نہیں ہے, “لڑکا اور لڑکی دونوں ہی کا تعلق گجراتی پٹیل کمیونٹی سے ہے”۔

گزشتہ دنوں اس ویڈیو کو لوجہاد سے جوڑ کر ہندی کیپشن کے ساتھ سوشل میڈیا پر خوب شیئر کیا گیا۔ جس کے بعد نیوز چیکر کی ہندی ٹیم نے اسے ڈی بنک کیا تھا۔ یہاں کلک کرکے پوری تحقیقات پڑھ سکتے ہیں۔

Conclusion

اس طرح ہماری تحقیقات میں ثابت ہوا کہ نوجوان کے ہاتھوں لڑکی کے قتل کی اس ویڈیو کو گمراہ کن دعوے کے ساتھ شیئر کیا گیا ہے۔ میڈیا رپورٹ اور پولس کے بیان سے واضح ہوا کہ اس معاملے میں کسی بھی طرح کا مذہبی رنگ نہیں ہے، قاتل اور مقتول دونوں کا تعلق ایک ہی مذہب سے ہے اور دونوں ہی گجراتی پٹیل ہے۔

Result: False Context / False

Our Sources

Report Published by Dainik Bhaskar befor 24 days
Report Published by BBC Hindi News Youtube Channel on 17/02/ 2022
Report Published by Ahmedabad Mirror on 14/02/2022
Newschecker talk PSI Kamrej P.M. Parmar

نوٹ:کسی بھی مشتبہ خبرکی تحقیق،ترمیم یا دیگرتجاویز کے لئے ہمیں نیچے دئیے گئے واہٹس ایپ نمبر پر آپ اپنی رائے ارسال کر سکتےہیں۔

9999499044

Mohammed Zakariya
Mohammed Zakariya
Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation from Lucknow University.
Mohammed Zakariya
Mohammed Zakariya
Zakariya has an experience of working for Magazines, Newspapers and News Portals. Before joining Newschecker, he was working with Network18’s Urdu channel. Zakariya completed his post-graduation from Lucknow University.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Most Popular